اسلام آباد ہائی کورٹ میں مشتعل وکلاء کی تھوڑ پھوڑ ، چیف جسٹس کا بڑا حکم #racepknews #racedotpk

Share on facebook
Share on google
Share on twitter
Share on linkedin


اسلام آباد : ہائی کورٹ میں مشتعل وکلا کی تھوڑ پھوڑ کے واقعے کے بعد چیف جسٹس اطہر من اللہ نے اسلام آبادہائیکورٹ اور ڈسٹرکٹ کورٹ تاحکم ثانی بند کرنے کے احکامات جاری کردیئے۔

تفصیلات کے مطابق اسلام آباد کچہری میں چیمبرز گرانے کے خلاف وکلا نے چیف جسٹس کے چمبر سمیت رجسٹرار براچ کو کھنڈرات میں تبدیل کر دیا۔

وکلا نعرے لگاتے ہوئے اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس بلاک میں داخل ہوئے اور بلاک میں کھڑکیوں کے شیشے، ایل سی ڈی ٹیبل اور دروازے توڑے، وکلا کا کہنا تھا کہ اگر کچہری میں غیر قانونی چمبر گرائے گئے ہیں تو چیف جسٹس کا چمبر بھی تھنس نھنس کریں گے۔
کوریج کے دوران اے آر وائی نیوز نمائندہ خصوصی جہانگیر اسلم بلوچ کو بھی زد کوب کیا گیا، ہائیکورٹ میں موجود سیکورٹی اہلکاروں نے جہانگیر اسلم کو کلا کے چنگل سے بچایا اور ہائیکورٹ کے ڈسپنسری میں منتقل کیا۔

اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس بلاک میں جب وکلا آئے تو اس وقت اسپیشل سکیورٹی پولیس نہیں تھی اور اسلام آباد پولیس کے دستے کافی دیر بعد عدالت پہنچے جب کہ اس دوران چیف جسٹس اسلام آبادہائیکورٹ جسٹس اطہرمن اللہ اپنے چیمبر میں محصور ہو گئے۔

مشتعل وکلا چیف جسٹس کی موجودگی میں چیف جسٹس کے چمبر میں تھوڑ پھوڑ کی اور ساتھ ہی صحافیوں اور عدالتی اہلکاروں سے بدتمیزی کرتے رہے۔

وکلا نے اسلام آباد کی ضلع کچہری میں تمام عدالتیں بند کرادیں اور اسلام آباد ہائیکورٹ میں بھی مقدمات کی کارروائی روک دی گئی۔

وکلا کے احتجاج کے سبب اسلام آباد ہائیکورٹ میں تمام سائلین کا داخلہ بھی بند کر دیا گیا اور ہائیکورٹ کی سروس روڈ کو بھی ٹریفک کے لیے بند کر دیا گیا۔

مشتعل مظاہرین سے جسٹس محسن اختر کیانی نے وکلا کو بار روم میں بیٹھ کر بات کی پیشکش، جسٹس محسن اختر کیانی نے کہا کہ بیٹھ کر بات نہیں کریں گے تو مسئلہ حل نہیں ہو گا، چیف جسٹس کے چیمبر سے ساتھیوں کو نکالیں تاکہ بات ہو سکے، اگر وکلا کو لگتا ہے ان سے زیادتی ہوئی تو بیٹھ کر ہمیں بتائیں۔

سیکرٹری داخلہ آئی جی پولیس اسلام آباد، ڈپٹی کمشنر، سیکٹر کمانڈر رنجیز، رجسٹرار اسلام آباد اور چیف جسٹس اطہرمن اللہ سے طویل مذاکرات جاری ہیں، چیف جسٹس نے آئی جی اسلام آباد کو ناقص سیکیورٹی انتظامات پر سرزنش کی، موجودہ صورتحال کے مطابق حالات رینجرز اور پولیس کے کنٹرول سے باہر ہو گئے۔

اسلام آبادہائیکورٹ کے سامنے وکلا کا شدید احتجاج اورہنگامہ آرائی ،چیف جسٹس اطہر من اللہ سمیت ججز اپنے چیمبرز میں محصور ہو رہ گئے ،وکلا کی ججز چیمبر ز اور رجسٹرارآفس میں توڑ پھوڑ،کھڑکیوں کے شیشے اور دروازے توڑ دیئے جبکہ چیف جسٹس اطہر من اللہ سمیت ججز اپنے چیمبرز میں محصور ہو کر رہ گئے ،پولیس کے اضافی دستے طلب کرلئے گئے ،اسلام آبادہائیکورٹ چیف جسٹس بلاک میں جب وکلا آئےتواسپیشل سیکیورٹی پولیس نہیں تھی۔

بعد ازاں اسلام آبادہائیکورٹ اورڈسٹرکٹ کورٹ تاحکم ثانی بندکرنےکےاحکامات جاری کردیئے گئے ، احکامات چیف جسٹس ہائیکورٹ کی جانب سے جاری کئے گئے ، ترجمان کا کہنا ہے کہ جب تک معاملات ٹھیک نہیں ہوتےہائیکورٹ،ڈسٹرکٹ کورٹس بندرہیں گے۔

Comments





Source link

Leave a Replay

Sign up for our Newsletter

%d bloggers like this: